ہمارے پاس میں اک گھر۔۔۔۔۔۔غزل

ہمارے پاس میں اک گھر۔۔۔۔۔۔غزل
  • 11
    Shares

ہمارے    پاس   میں   اک   گھر  بڑا  شمشان  رہتا  ہے
مجھے  شک  ہے    وہاں    شاید  کوئی  انسان رہتا ہے

یہاں  جو  لوگ  کہتے ہیں کہ  وہ، طوفان   ہیں، سن لیں
جو  بستی  ڈوب   جائے   تو   شہر   ویران   رہتا   ہے

ہوئے  دشمن  سبھی خاموش، مگر یہ  بات بھی سچ ہے
جہاں   پر  ہم    نہیں  ہوتے،   وہاں   شیطان   رہتا   ہے

جو   اکسر   کوستے   رہتا   ہے    اپنی   کم   نصیبی   کو
یہ   ایسا   شخص   جنت   میں   بھی   حیران   رہتا   ہے

وہ  ایک  مزدور  پیشہ  شخص  جسے  ہم  “باپ” کہتے ہیں
اگر   وہ   گھر  میں  نہ   آئے  تو    گھر   سنسان   رہتا  ہے

میرا  اک  دشمنے  جاں   مجھ   سے   کل   کہنے   لگا   تابش
تو    اپنی    زات   کے   اندر   بڑا   بے   جان     رہتا     ہے

جعفر حسین تابش ۔۔۔۔۔۔۔ مغلمیدان کشتواڑ

Leave a Reply

Your email address will not be published.