غزل۔۔۔۔۔۔۔جعفر حسین تابش

غزل۔۔۔۔۔۔۔جعفر حسین تابش
  • 7
    Shares

ملنا  خوش  رنگ  بہاروں  سے  اکیلے  تابش
اپنی  آنکھوں  میں   بسا   لینا  وہ  ملے تابش

شیخ  نے  روک  کے  رکھے ہیں مسلماں سارے
اور  ہاتھوں   میں  تھما  رکھے  ہیں  تھیلے تابش

وہ  تو  بیٹھے  رہا  مسند   پہ  اجالا   کرکے
اور  ستم   شب   کے  کسی  اور  نے  جھیلے  تابش

شیخ   سے   جا کے  کہو  بند  یہ  تجارت   کر دے
ہے   کھلاڑی   تو  میرے  سامنے  کھیلے   تابش

کچھ   تو  انصاف   نے  گھونٹا  ہے  گلا  لوگوں  کا
اور   بہا   لیتے   ہیں   کچھ   ظلم   کے  ریلے  تابش

حق  پرستوں   کو   قفس   میں  بھی  خدا  یاد رہا ہے
مجھ  کو  کافر  جسے  کہنا  ہے   وہ   کہلے   تابش

جعفر حسین تابش۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مغلمیدان،کشتواڑ
طالب علم بی اے(سمسٹر اول) ڈگری کالج کشتواڑ

Leave a Reply

Your email address will not be published.